’امریکا کے افغانستان سے انخلا کی کہانی ابھی ختم نہیں ہوئی‘ Play Video سعودی انٹیلی جنس کے سابق سربراہ شہزادہ ترکی بن فیصل السعود نے کہا ہے کہ سعودی عرب نے افغانستان سے القاعدہ کے سربراہ اسامہ بن لادن کی حوالگی کی درخواست کی تھی لیکن طالبان رہنما ملا عمر نے اسامہ کو حوالے کرنے سے انکار کر دیا تھا۔ سعودی ٹی وی کو انٹرویو دیتے ہوئے شہزادہ ترکی بن فیصل کا کہنا تھا کہ امریکا کے افغانستان سے انخلا کی کہانی ابھی ختم نہیں ہوئی، افغانستان کے پڑوسی ممالک کے اپنے مفادات ہیں اور وہ اپنے مفادات کی تلاش میں ہیں۔ شہزادہ ترکی بن فیصل کا کہنا تھا کہ افغانستان میں کس کی حکومت ہو گی اور کس کی نہیں، صورتحال ابھی پیچیدہ ہے۔ دوران انٹرویو سابق سربراہ سعودی انٹیلی جنس نے انکشاف کیا کہ ملاعمر سے اسامہ بن لادن کی حوالگی کی درخواست کی تھی لیکن ملا عمر نے اسامہ کو سعودی عرب کے حوالےکرنے سے انکار کر دیاتھا، اسامہ بن لادن ہمارے حوالے کر دیئے جاتے تو نائن الیون نا ہوتا۔ 20 برس سے زائد عرصے تک سعودی انٹیلی جنس کے سربراہ رہنے والے ترکی بن فیصل السعود کا کہنا تھا کہ جلد افغانستان کے حوالے سے کتاب شائع کروں گا۔ مزید خبریں : امریکا کا افغانستان میں دہشتگردی کے کیمپ نظر آنےکی صورت میں کارروائی کا اعلان امریکا کا افغانستان میں دہشتگردی کے کیمپ نظر آنےکی صورت میں کارروائی کا اعلان 29 جولائی ، 2021 افغانستان میں سیلاب سے 40 افراد ہلاک، 150 سے زائد لاپتہ افغانستان میں سیلاب سے 40 افراد ہلاک، 150 سے زائد لاپتہ 29 جولائی ، 2021 پرائمری اسکول ٹیچر ملک کا صدر بن گیا پرائمری اسکول ٹیچر ملک کا صدر بن گیا 29 جولائی ، 2021 ویڈیو: کھانے پینے کی اشیاء پر بندروں نے سڑک پر ہلہ بول دیا، ٹریفک جام ویڈیو: کھانے پینے کی اشیاء پر بندروں نے سڑک پر ہلہ بول دیا، ٹریفک جام 29 جولائی ، 2021 الاسکا کے جزیرے پر 8.2 شدت کا زلزلہ، سونامی کی وارننگ جاری الاسکا کے جزیرے پر 8.2 شدت کا زلزلہ، سونامی کی وارننگ جاری 29 جولائی ، 2021 ویڈیو: برطانوی وزیراعظم کیلئے چھتری کا استعمال چیلنج بن گیا ویڈیو: برطانوی وزیراعظم کیلئے چھتری کا استعمال چیلنج بن گیا 29 جولائی ، 2021 امریکا نے انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں پر بھارت کوخبردار کردیا امریکا نے انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں پر بھارت کوخبردار کردیا 29 جولائی ، 2021 کورونا ویکسین لگوائیں 100 ڈالر پائیں کورونا ویکسین لگوائیں 100 ڈالر پائیں 29 جولائی ، 2021 بھارت کی 2 ریاستوں کے درمیان سرحدی تنازعہ پر گولیاں چل گئیں،6 پولیس اہلکار مارے گئے بھارت کی 2 ریاستوں کے درمیان سرحدی تنازعہ پر گولیاں چل گئیں،6 پولیس اہلکار مارے گئے 28 جولائی ، 2021 افغان صدر کی امن کیلیے ملک میں قبل از وقت انتخابات کی پیشکش افغان صدر کی امن کیلیے ملک میں قبل از وقت انتخابات کی پیشکش 28 جولائی ، 2021 طالبان کی چین کو افغان سرزمین کسی بھی ملک کیخلاف استعمال نہ ہونےکی یقین دہانی طالبان کی چین کو افغان سرزمین کسی بھی ملک کیخلاف استعمال نہ ہونےکی یقین دہانی 28 جولائی ، 2021 امریکا میں بھارتی وائرس ’ڈیلٹا‘ نے خطرے کی گھنٹی بجا دی امریکا میں بھارتی وائرس ’ڈیلٹا‘ نے خطرے کی گھنٹی بجا دی 28 جولائی ، 2021 تازہ ترینسب دیکھیں 14 منٹ پہلے اداکارہ سلمیٰ حسن نے ڈپریشن سے نجات کیسے حاصل کی؟ 15 منٹ پہلے پنجاب کے 46 فیصد شہری بزدار حکومت کی کارکردگی سے ناخوش 24 منٹ پہلے محمد زبیر نے (ن) لیگ میں دو بیانیوں کی کنفیوژن کا اعتراف کرلیا 36 منٹ پہلے شلپا شیٹی سوشل میڈیا ایپس کیخلاف عدالت پہنچ گئیں 38 منٹ پہلے کراچی: گاڑی پارک کرنے کے جھگڑے پر خاتون جان سے ہاتھ دھو بیٹھی 42 منٹ پہلے شوہر کو شوہر ہی سمجھیں اور ایک درجہ اوپردیں: صدف کنول 50 منٹ پہلے نور مقدم کیس: ملزم ظاہر جعفر کو پنجاب فرانزک لیب پہنچادیا گیا 56 منٹ پہلے شلپا شیٹی کی والدہ کے ساتھ ڈیڑھ کروڑ کا فراڈ ہوگیا

سعودی انٹیلی جنس کے سابق سربراہ شہزادہ ترکی بن فیصل السعود نے کہا ہے کہ سعودی عرب نے افغانستان سے القاعدہ کے سربراہ اسامہ بن لادن کی حوالگی کی درخواست کی تھی لیکن طالبان رہنما ملا عمر نے اسامہ کو حوالے کرنے سے انکار کر دیا تھا۔

سعودی ٹی وی کو انٹرویو دیتے ہوئے شہزادہ ترکی بن فیصل کا کہنا تھا کہ امریکا کے افغانستان سے انخلا کی کہانی ابھی ختم نہیں ہوئی، افغانستان کے پڑوسی ممالک کے اپنے مفادات ہیں اور وہ اپنے مفادات کی تلاش میں ہیں۔

شہزادہ ترکی بن فیصل کا کہنا تھا کہ افغانستان میں کس کی حکومت ہو گی اور کس کی نہیں، صورتحال ابھی پیچیدہ ہے۔

دوران انٹرویو سابق سربراہ سعودی انٹیلی جنس نے انکشاف کیا کہ ملاعمر سے اسامہ بن لادن کی حوالگی کی درخواست کی تھی لیکن ملا عمر نے اسامہ کو سعودی عرب کے حوالےکرنے سے انکار کر دیاتھا، اسامہ بن لادن ہمارے حوالے کر دیئے جاتے تو نائن الیون نا ہوتا۔

20 برس سے زائد عرصے تک سعودی انٹیلی جنس کے سربراہ رہنے والے ترکی بن فیصل السعود کا کہنا تھا کہ جلد افغانستان کے حوالے سے کتاب شائع کروں گا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں